Usse Bhool Ja

کہاں آ کے رکنے تھے راستے کہاں موڑ تھا اسے بھول جا

وہ جو مل گیا اسے یاد رکھ جو نہیں ملا اسے بھول جا

وہ تیرے نصیب کی بارشیں کسی اور چھت پے برس گیں

دل بے خبر میری بات سن اسے بھول جا اسے بھول جا

میں تو گم تھا تیرے ہی دھیان میں تیری آس تیرے گمان میں

صبا کہ گیئ مرے کان میں میرے ساتھ آ اسے بھول جا

کہیں چک جاں کا رفو نہیں کسی آستین پے لہو نہیں

کیہ شہید راہ ملال کا نہیں خون بہا اسے بھول جا

کیوں اٹا ہوا ہے غبار میں غم زندگی کے فشار میں

وہ جو درج تھا تیرے بخت میں سو وہ ہو گیا اسے بھول جا

نہ وہ آنکھ تیری آنکھ تھی نہ وہ خواب ہی تیرا خواب تھا

دل منتظر تو یہ کس لئے تیرا جاگنا اسے بھول جا

یہ جو رات دن ہے کھیل سا اسے دیکھ اس پر یقین نہ کر

نہیں عکس کوئی بھی مستقل سر آیینہ اسے بھول جا

جو بساط جاں ہی الٹ گیا وہ جو راستے سے پلٹ گیا

اسے روکنے سے حصول کیا اسے مت بلا اسے بھول جا

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: